Latest stories

فخر ھوتا ھے قبیلے کا سدا ایک ھی شخص

ف

دوعشرے قبل مطالعہ کی ھوئ تحریر کا نقش اب بھی یادداشت کے افق پر جگمگاتا ھے ،صاحب تحریر نے اسے Medics with Mission کا عنوان دیا تھا ،یعنی وہ ڈاکٹرز جو ایک مشن کی تکمیل میں لگے ھوئے تھے۔یہ وہ لوگ تھے جو اپنے گھر بار اور پریکٹس کو تج کے ایسے علاقوں میں لوگوں کو فائدہ پہنچانے گئےتھے جہاں کے لوگ شدید خطرات سے دوچار تھے ،یہ سب ماھر ڈاکٹرز اور نامور پیشہ ور اپنے علم اور فن کو ان مجبوراور مظلوم لوگوں کی...

میں نے دیکھا ہے سمندر، اک ندی میں گرگیا – تحریر :سید وقاص جعفری,

م

پہاڑوں اور پانیوں کی انسان سے نہ جانے کیا اُنسیت ہے کہ یہ ایک دوسرے سے جدا ہی نہیں ہوتے۔ پہاڑوں کی بلندیاں انسان کو نئے عزائم اور چیلنجز کی طرف بلاتی ہیں، اور پانیوں کا بہاؤ، زندگی کو ہر آن نمو کی دعوت دیتا ہے۔ یہی پانی غضبناک ہو کر بستیوں کو کھا جاتا ہے لیکن انسانی آبادیاں اس سے وابستہ رہنے میں ہی اپنی بقا سمجھتی ہیں۔ پہاڑ انسانوں کو نگل لیتے ہیں مگر ان کی کشش، مقناطیس کی طرح لوگوں کو اپنی طرف...

جمعیت! ہم نے بھی کچھ دیکھ رکھا ہے – سید معظم معین

ج

قبلہ آصف محمود صاحب نے اسلامی جمعیت طلبہ کے یوم تاسیس پر جو لکھا ہے، اس کے بارے میں اوّل تو یہی کہا جا سکتا ہے کہ ہر لکھاری کی ہر تحریر درست نہیں ہو سکتی، کہیں نہ کہیں غوطہ کوئی بھی کھا سکتا ہے، وہ خود بھی اکثر یہی باور کرواتے نظر آتے ہیں۔ ویسے بھی یہ تحریر پہلی ہے نہ اس میں کی جانے والی باتیں نئی ہیں، یہ وہی باتیں ہیں جو ازل سے ہم سنتے اور پڑھتے اور ہنستے آئے ہیں۔ اور نہ ہی یہ مضمون آخری ہوگا،...

جمعیت کی لازوال قربانیاں:

ج

22مئی 1974ء کو نشتر میڈیکل کالج ملتان کے کم وبیش سو طلبہ اسلامی جمعیت طلبہ کے منتخب یونین صدر اور ناظم ارباب عالم کے ہمراہ شمالی علاقہ جات کی سیر کے لیے چناب ایکسپریس کے ذریعے ملتان سے پشاور جا رہے تھے۔ ٹرین ربوہ اسٹیشن پر رکی تو حسب معمول قادیانی نوجوانوں نے قادیانیت کا لٹریچر تقسیم کرنا شروع کر دیا، لیکن آج مسافروں کا ردعمل مختلف تھا۔ طلبہ نے لٹریچر پھاڑ دیا اور ختم نبوت زندہ باد او ر رہبر و...

Ahbab Club

Get in Touch